تحریک انصاف حلقہ این اے 61 میں کمزور ؟

pti

راولپنڈی ( اے ایف بی)کنٹونمنٹ بورڈ راولپنڈی اور چکلالہ کنٹونمنٹ بورڈ کے 20 وارڈز میں تحریک انصاف کووفاق اور صوبائی پنجاب میں حکومت ہونے کے باوجود بدترین شکست کاسامنا کرنا ، بلخصوص راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ میں ن لیگ نے کلین سویپ کیا تھا بلدیاتی الیکشن میں بدترین شکست کے باوجود تحریک انصاف کے این اے 61 سے ایم این اے عامرکیانی نے کارکنوں کے علاؤہ اہلیان علاقہ کو پلٹ کر نہ دیکھا جس سے ان کی گرفت حلقے میں کمزروپڑگئی ہے ، عامر کیانی اپنا سیکرٹریٹ تک نہ بنا سکا مقامی ایم پی ایز کے دفاتر کے باہر بورڈآویزاں کروارکھے لیکن عوام کو میسر نہ ہوئے ان کے حلقہ نیابت میں کوئی میگا منصوبہ شروع نہ ہوسکا ۔اہلیان کینٹ کے لیے پینے کے صاف پانی کےلیے کوئی فلٹریشن پلانٹ ، صحت کی سہولت کےلیے ہسپتال تو دور کی بات ڈسپنسری تک نہ بنوا سکے، گلیوں کی مرمت کسی حد تک صوبائی وزیروحلقہ پی پی 14 سے راجہ بشارت اورحلقہ 15 سے عمر بٹ نے کروائی ہیں لیکن یہ بھی اپنے قوں میں کوئی بڑا ترقیاتی منصوبہ نہیں دے سکے ، حلقہ این اے 61 میں ن لیگ کے امیدوار سابق ایم این اے ملک ابرار کی پوزیشن مستحکم کرلی ہے ، اس حلقے میں آمدہ الیکشن کےلیے ن لیگ نے مہم شروع کررکھی ہے ، پی پی 14 سے چوہدری تنویر کے صاحبزادے اسامہ تنویر ہوں اور پی پی 15 سے ملک افتحار کا الیکشن لڑنے کا امکان ہے ، ن لیگ کے صوبائی امیدوار اسامہ تنویر بھی اپنے گھر تک محدود ہوکررہ گئے تھے حلقہ کی عوام سے رابطہ نہ ہونے سے اس حلقے سے تحریک انصاف کے راجہ بشارت کی پوزیشن مستحکم نظر آرہی ہے ، اس حلقے میں پیپلز پارٹی کے پاس مضبوط امیدوار زمرد خان ہیں لیکن وہ الیکشن لڑنے سے گریز کررہے ہیں جس کے باعث پیپلزپارٹی کے پاس اس حلقے سے کوئی مضبوط امیدوار نہیں ، ن لیگ کے جو ورکر ن لیگ کو چھوڑ گئے ہیں وہ مقامی ایم این اے کے رویے کے باعث پارٹی میں واپس جانے کی تیاریاں کررہے ہیں آئندہ چند ہفتوں تک ن لیگ باقاعدہ مہم شروع کرے گی ، اس حلقے سے جماعت اسلامی اور تحریک لبیک بھی حصہ لے گی ،

اپنا تبصرہ بھیجیں