آزاد کشمیر بجٹ اجلاس اپوزیشن نے ایوان کوتالالگادیا

مظفرآباد(اے ایف بی) آزاد جموں کشمیر قانون ساز اسمبلی کا بجٹ اجلاس اپوزیشن نے ایوان کو ااجتجاجا تالا لگا دیا ایوان کی دروازے کے سامنے احتجاجی دھرنا کرپٹ حکومت نااہل حکومت کے نعرے اپوزیشن کے دھرنے کے باعث حکومتی اراکین گیلری پھلانگ کر ایوان میں داخل ہوے جس کے بعد اپوزیشن رکن اسمبلی احمد رضا قادری نے بجلی کا مرکزی سوئچ آف کر دیا ایوان میں حبس جس کے بعد سیکرٹری اسمبلی و عملہ متبادل ذرائع سے کافی دیر بعد بجلی بحال کرنے میں کامیاب ہوے
اپوزیشن کے بغیر ایوان کیسے چلایا جا سکتا ہے قواعد انضباط کار میں یکطرفہ ترمیم کر کے اپوزیشن کو دیوار سے لگانے کی کوشش کامیاب نہیں ہونے دیں گے حکومت نے یکطرفہ طور عدد برتری کا سہارا لیکر اسمبلی کی قواعد انضباط کار میں ترمیم کر کے ایوان کی قائمہ کمیٹوں کی سربراہی وزرا کے سپرد کر دی جو غیر آئینی غیر قانونی ہے ایک سال سے قانون ساز اسمبلی کی کمیٹیوں کی تشکیل نہیں ہوسکی پبلک اکاونٹس کمیٹی سمیت اہم کمیٹیوں کی تشکیل نا ہونے سے ایوان غیر فعال ہے بنیادی مسلہ یہ ہے کہ سپیکر نے غیر قانونی طور پر رولز میں ترمیم کی زبانی طور یہ ممکن نہیں اس کے لیے سات دن پہلے نوٹس دینا ہوتا ہے اور یہ تحریری پیش ہوتی ہےمشال ملک کو وزیراعظم اسمبلی بلا کر خود نہیں آے احتجاج بلا کر غائب ہوگئے حکومت کہاں ہے چوہدری لطیف اکبر راجہ فاروق حیدر چوہدری یاسین شاہ غلام قادر احمد رضا قادری جاوید ایوب بازل نقوی عامر الطاف قاسم مجید و دیگر کا قانون ساز اسمبلی کے صدر دروازے پر علامتی اجلاس سے خطاب، میڈیا سے گفتگو اپوزیشن رہنماوں کا کہنا تھا کہ ہم نے مذاکرات میں لچک دکھائی اور کہا کہ صرف رولز میں ترامیم کو واپس لے لیں مگر حکومت نے میں نا مانوں والی پالیسی اپنائی رکھی ہے فنڈز نا تو یہ اپنے گھر سے دیتے ہیں منتخب نمائندوں کی توہین کرنے والے یاد رکھیں کہ کل وہ خود اس جگہ پر ہونگے یہ ایوان کی کمیٹیوں کی سربراہ وزرا نہیں کر سکتے
مظفرآباد اپنے ہی محکمے کی کارکردگی کو چانچنے کے لئے کمیٹی کی سربراہی خود کرنا جمہوریت کے منافی ہے اپوزیشن کے پاس عوام کا زیادہ مینڈیٹ ہے ہمیں دس لاکھ ووٹ ملے ہیں جبکہ حکومت کو چھ لاکھ ووٹ ملے حکومت سکیل 7 سے لیکر 14 تک تھرڈ پارٹی سے تقرری کا قانون موجودہ حکومت ختم کرنا چاہتی ہے ہم نے جو آئینی مالیاتی انتظامی اختیارات حاصل کیے اس کا فائدہ آج موجودہ حکومت کو ہورہا ہے یتیم بچوں بیواوں طلاق یافتہ اور بے سہارا افراد کی کفالت کے لیے قانون سازی کی حکومت کٹ کا رونا روتی ہے اور گاڑیاں بھی خرید رہی ہے ہم بھی حکومت میں رہے ہم نے اس طرح نہیں کیا قائد ایوان کہاں ہیں یہ نظام نہیں چل سکتا وزارت عظمی اور حکومت بہت بڑی ذمہ داری کی بات ہے لیکن یہاں کسی کو احساس نہیں یے اس عمارت کی خشت اول ہی غلط ہے یہ اسمبلی اراکین کی تذلیل و توہین کرنے کی کسی کو اجازت نہیں دے سکتے حکومت اور اپوزیشن دو پہیہ کسی ایک کے بغیر گاڑی نہیں چل سکتی یہاں اسمبلی اپوزیشن چلا رہی ہے حکومت اجلاس سے راہ فرار اختیار کرتی ہے یہ واحد حکومت ہے جو اجلاس سے بھاگ رہی ہے اپوزیشن ریکوزیشن جمع کرواکر اجلاس بلاتی ہے لیکن حکومت اجلاس نہیں چلاتی اور بھاگ جاتی ہے تین ماہ ہونے کو ہیں کسی جگہ حکومت نظر نہیں آرہی جو وزرا مذاکرات کے لیے آتے ہیں ان کے پاس کوئی اختیار ہی نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں