این اے 133 ضمنی الیکشن : تحریک انصاف کے امیدوار کو بڑا جھٹکا

لاہور(اے ایف بی)لاہور ہائی کورٹ نےتحریک انصاف کے امیدوار جمشید چیمہ کی این اے 133 کے ضمنی انتخاب کیلئے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے کیخلاف درخواست مسترد کردی۔اہور ہائیکورٹ نے تحریک انصاف کے امیدوار جمشید چیمہ اور اُن کی اہلیہ مسرت چیمہ کے این اے 133 کے ضمنی انتخاب کیلئے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے کیخلاف درخواستیں خارج کر دیں,تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس جواد حسن کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے جمشید چیمہ اور اُن کی اہلیہ مسرت چیمہ کی درخواستوں پر سماعت کی۔

درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ تجویز کنندہ کے تمام گھر والوں کے ووٹ این اے 133 میں درج ہیں اور این اے 133 کی کئی یونین کونسلز میں آبادی سے زیادہ ووِٹرز ہیں۔وکیل کا کہنا تھا کہ حلقے میں 46 ہزار ووٹرز مشکوک ہیں، اسی لیے اس الیکشن شیڈول کو کالعدم قرار دینے کی بھی استدعا کی ہے۔عدالت نے ریمارکس دیے کہ جب دو افراد ایک ہی گھر میں رہتے ہوں تو ووٹ کس طرح الگ الگ حلقوں میں رجسٹرڈ ہو سکتا ہے۔

الیکشن کمیشن کے وکیل کا کہنا تھا کہ فارم 15 کے ذریعے کاغذات نامزدگی کے سقم کا درست کیا جاسکتا لیکن ایسا نہیں کیا گیا، ن لیگی امیدوار شاٸستہ پرویز ملک کے وکیل بھی درخواستوں پر اعتراضات اٹھاٸے۔عدالت نے وکلا کے دلائل کے بعد تحریک انصاف کے امیدوار جمشید چیمہ اور اُن کی اہلیہ مسرت چیمہ کے این اے 133 کے ضمنی انتخاب کیلئے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے کیخلاف درخواستیں خارج کر دیں۔خیال رہے جمشید چیمہ اور اُن کی اہلیہ کے کاغذات نامزدگی ریٹرنگ آفیسر نے مسترد کیے اور اس فیصلے کو الیکشن اپیلٹ ٹریبونل بے بھی برقرار رکھا تھا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

Protected with IP Blacklist CloudIP Blacklist Cloud