سکولوں کی بندش، آوٹ آف سکول بچوں کی تعدادبڑھنے کاخدشہ

راولپنڈی (اے ایف بی ) تمام اداروں کو کھلا رکھ کر تعلیمی اداروں کو بند کرنا تعلیم دشمنی ہے، حکومت کے منفی اقدامات کی وجہ سے آؤٹ آف سکول بچوں کی تعداد دن بدن بڑھ رہی ہے، کورونا کی تیسری لہر میں تعلیمی ادارے بند ہونے کی وجہ سے مزید تعلیمی ادارے ختم ہو جائیں گے، حکومت کے بچوں میں کورونا وائرس کی نشاندہی WHO کی رپورٹ کے متصادم ہے، تعلیمی ادارے بند ہونے کے باوجود بچوں میں کورونا وائرس حکومت کی ناقص پالیسی کا نتیجہ ہے، حکومت تعلیمی سرگرمیاں فلفور بحال کرے، 8 اپریل کا لانگ مارچ تعلیم کی بحالی کے لئے ہے، حکومت نے ٹھوس اقدامات نہ کئے تو مطالبات کی منظوری تک دھرنا دیا جائے گا،

ان خیالات کا اظہار آل پاکستان پرائیویٹ سکولز اینڈ کالجز ایسوسی ایشن پنجاب کے صدر راجہ محمد الیاس کیانی, سیکرٹری جنرل محمد اشرف ہراج، ڈویژنل صدر عرفان مظفر کیانی ،سردار گل زبیر ، جاوید اقبال راجہ ،محمد ابراہیم نے لانگ مارچ کے حوالے سے مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، قائدین نے کہا کہ لانگ مارچ کے انتظامات مکمل ہیں، راولپنڈی اسلام آباد کے رہنما اور کارکن میزبانی کے فرائض انجام دیں گے، راولپنڈی اسلام کے مختلف مقامات پر استقبالیہ کیمپ لگائے جائیں گے، جی روڈ اور موٹر وے سے آنے والے قافلوں کا الگ الگ استقبال کیا جائے گا، لانگ مارچ کے روٹ کو حتمی شکل دی جا رہی ہے جس کا باقاعدہ اعلان جلد کر دیا جائے گا،

لاہور سے کاشف مرزا، اور تاجر رہنما نعیم میر کی قیادت میں لانگ مارچ کا قافلہ بذریعہ جی ٹی روڈ اسلام آباد کی طرف روانہ ہو گا، تاجر تنظیمیں ، سول سوسائٹی، ٹرانسپورٹر، طلباء تنظیمیں بھرپور شرکت کریں گی ہوں،لانگ مارچ پرامن ہو گا حکومت نے لانگ مارچ میں رخنہ ڈالنے کی کوشش کی تو حالات کی خرابی کی خود ذمہ دار ہوں گی، انہوں نے کہا کہ ہمارے کوئی سیاسی عزائم نہیں، پرائیویٹ سیکٹر کے حقوق کے حصول کی جنگ ہے جو مطالبات منظور ہونے تک جاری رہے گی،

اپنا تبصرہ بھیجیں

Protected with IP Blacklist CloudIP Blacklist Cloud