بنگلہ دیش: مسجد میں گیس بھر جانے سے دھماکے میں جاں بحق افراد کی تعداد میں اضافہ

ڈھاکہ(اے ایف بی)مسجد میں گیس بھر جانے سے دھماکے میں جاں بحق افراد کی تعداد میں اضافہ۔ اب تک مجموعی طور پر 17 افراد کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کر دی گئی ہے، مزید اموات کا خدشہ۔ تفصیلات کے مطابق بنگلہ دیش میں مسجد کے اندر گیس بھر جانے سے ہونے والے مشتبہ دھماکے کے نتیجے میں 17 افراد جاں بحق اور درجنوں زخمی ہوگئے ہیں۔الجزیزہ کے مطابق مطابق پولیس نے حادثے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ دھماکے کے نتیجے میں کم از کم 17 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں جن میں ایک سات سالہ بچہ بھی شامل ہے۔ مقامی پولیس کے مطابق دھماکہ اس وقت ہوا جب عشا کی نماز ختم ہونے ہی والی تھی۔ امدادی سرگرمیوں میں مصروف حکام نے بتایا کہ دھماکہ ضلع نارائن گنج کی مسجد میں ہوا جس کے بعد آگ نے مسجد کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

حادثے کے بارے میں تفتیش کاروں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ مسجد کے اندرنصب ایئر کنڈیشنز کی وجہ سے دھماکہ ہوا۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کے باعث مسجد میں نصب ایئر کنڈیشنز سے لیک ہونے والی گیس بھر گئی اور جب بجلی بحال ہوئی تو دھماکہ ہوگیا۔ نارائن گنج کے فائر چیف عبداللہ العارفین نے بتایا کہ لیک ہونے والی گیس مسجد میں بھر گئی تھی۔
ان کا کہنا تھا کہ جب مساجد انتظامیہ نے کھڑکیاں اور دروازے بند کردیے اور ائیرکنڈیشنز کو آن کیا تو وہاں بجلی کے اسپارک سے میں مسجد کے اندر دھماکہ ہوا۔ حکام نے بتایا کہ حادثے میں جاں بحق 12 افراد کی لاشیں لواحقین کے حوالے کردی گئی ہیں۔

اس سے قبل ہسپتال کے ترجمان سامنت لال سین نے بتایا کہ 16 افراد جاں بحق جبکہ 37 افراد کو تشویشناک حالت میں ڈھاکہ کے برن سینٹر منتقل کردیا گیا۔انہوں نے کہا کہ متاثرین 70 سے 80 فیصد تک جھلس چکے ہیں۔ پولیس نے بتایا کہ دھماکے سے کم از کم 45 افراد زخمی ہوئے ہیں اور لوگوں نے گیس کے اخراج کی بدبو کا بھی ذکر کیا تھا۔ واضح رہے کہ دھماکے میں زخمی ہونے والے متعداد افراد کی حالت تشویشناک بتائی جا رہی ہے اور یہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اموات میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں