فردوس عاشق کورونا کی مریضہ شناخت چھپانے کا اعتراف

  لاہور(اے ا یف بی)سابق وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات فردوس عاشق اعوان نے کورونا کی مریضہ ہونے کے باوجود شناخت چھپانے کا اعتراف کر لیا۔ تفصیلات کے مطابق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے اس بات کا اعتراف کر لیا ہے کہ وہ بھی کورونا وائرس کا شکار ہو گئی تھیں لیکن انہوں نے اسے تمام لوگوں سے چھپایا۔ بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ شناخت چھپانے کا مقصد یہ تھا کہ میڈیا کو پتا نہ چل سکے، میں نے خبربا آسانی چھپائی، اس کا مطلب ہمارے سسٹم میں گیپ ہے۔

فردوس عاشق نے یہ بھی بتایا کہ انھیں ٹیسٹ کے نتائج اور رپورٹ ملی، صرف انہیں یا لیب کو پتہ تھا کہ وہ کرونا وائرس کا شکار ہوگئی ہیں۔بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہ انٹرنیٹ پر وائرل ہوا تھا کہ ثنا مکی کے قہوے سے کرونا کا مریض صحتیاب ہوجاتا ہے، میں ڈاکٹر تھی لیکن مجھے میری فیملی نے زبردستی قہوہ پلایا دیا ، یہ سب گھٹیا اور فضول باتیں ہیں، اس قہوے نے مجھے جتنا نقصان پہنچایا، شاید کرونا نے اتنا نقصان نہیں پہنچایا۔میرا امیونٹی سسٹم اس قہوے سے بہت متاثر ہوا۔ تاہم ان کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ اب وہ مکمل طور پر صحت یاب ہو چکی ہیں۔

خیال رہے کہ پوری دنیا کی طرح پاکستان بھی کورونا وائرس کا شکار ہو گیا تھا جس کے بعد حکومت پاکستان نے اقدامات کرتے ہوئے اب حالات کو کںٹرول میں کر لیا ہے۔ حالات کنٹرول میں ہونے کے بعد ہی اب پنجاب حکومت نے قبل ازوقت لاک ڈان ختم کردیا ہے۔ 

اپنا تبصرہ بھیجیں