ستمبر کے پہلے ہفتے میں ایس اوپیز کے ساتھ تعلیمی ادارے کھولنے کا فیصلہ

 اسلام آباد (اے ایف بی)وفاقی حکومت نے ستمبر کے پہلے ہفتے میں ایس اوپیز کے ساتھ تعلیمی ادارے کھولنے کا فیصلہ کرلیا، ستمبر میں تعلیمی ادارے کھولنے پر صوبائی وزرائے تعلیم نے بھی اتفاق کیا ہے، تاہم اگست کے دوسرے یا ستمبر کے پہلے ہفتے میں تعلیمی ادارے کھولنے کا حتمی اعلان نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کی اجازت کے بعد کیا جائے گا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کی زیر صدارت صوبائی وزرائے تعلیم کی کانفرنس ہوئی، کانفرنس اجلاس میں ستمبر میں تعلیمی ادارے کھولنے پر غور کیا گیا۔ اجلاس میں صوبائی وزرا نے وزیرتعلیم شفقت محمود کی تجویز سے اتفاق کیا ہے کہ ستمبر کے پہلے ہفتے میں ایس اوپیز کے ساتھ تعلیمی ادارے کھول دیے جائیں گے۔

بتایا گیا ہے کہ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال کا یومیہ بنیاد پرجائزہ لیا جا رہا ہے۔تاہم اب ملک میں کورونا وائرس کا زور ٹوٹنے لگا ہے۔ جس کے باعث حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ اگست کے دوسرے ہفتے یا پھر ستمبر کے پہلے ہفتے میں تعلیمی ادارے کھول دیے جائیں گے۔ اس حوالے سے ایس اوپیز پر مکمل عملدرآمد کروایا جائے گا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی مزید اجلاس بلائے جائیں گے، اجلاسوں میں این سی اوسی کی اجازت کے تحت سکول کھولنے کا حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔ابھی فی الحال این سی اوسی نے تعلیمی ادارے کھولنے کی اجازت نہیں دی ہے۔ کورونا وائرس کی صورتحال کو پیش نظر لاک ڈان کیا گیا تھا جس کے باعث 13مارچ سے تعلیمی ادارے بند کردیے گئے تھے۔

 واضح رہے حکومت پنجاب نے کورونا صورتحال کنٹرول میں دیکھتے ہوئے قبل ازوقت لاک ڈان ختم کردیا ہے۔ حکومت کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کا اطلاق گزشتہ رات بارہ بجے کے بعد فی الفور ہو چکا ہے۔جبکہ لاک ڈان ختم کرنے کا نوٹیفکیشن17اگست تک نافذالعمل رہے گا۔نوٹیفکیشن کے مطابق پنجاب بھر اور تمام اضلاع میں کریانہ اسٹورز صبح 9بجے سے شام 7بجے تک کھولنے کی اجازت ہوگی۔ تعلیمی ادارے شادی ہالز، ریسٹورانٹ، پارکس، سینما ہالزبدستور بند رہیں گے۔جبکہ میڈیکل اسٹورز، پنکچرزشاپس، اور تندور 24 گھنٹے کھلا رکھنے کی اجازت ہوگی۔ صوبے میں بین الاضلاع پبلک ٹرانسپورٹ کو بھی 24 گھنٹے چلانے کی اجازت دے دی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں