وزیراعظم کا پیر سے بیروزگاروں کو پیسہ منتقل کرنے کا اعلان

pm imran khan

اسلام آباد(اے ایف بی): وزیراعظم عمران خان نے کورونا ریلیف فنڈ کے ذریعے پیر سے بیروزگاروں کو پیسہ منتقل کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا لاک ڈاوَن میں نرمی ہماری مجبوری ہے، آج ان لوگوں کو روزگار دینانہ شروع کیا تو ان کے بھوک سے مرنے کا خدشہ ہے، قوم ذہن بنالے ہم نے اس سال کے آخر تک کورونا کیساتھ رہنا ہے ۔ کورونا کی صورتحال پر قوم سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہمارے ڈاکٹرز، نرسز کورونا کیخلاف جہاد لڑرہے ہیں ، ڈاکٹرز،پیرامیڈیکس عملے کی مشکلات کا حکومت کو پوری طرح احساس ہے ، اگر 3ماہ میں لاک ڈاوَن سے کورونا ختم ہوجاتا تو اس سے بہتر کچھ نہ ہوتا ۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ طبی ماہرین ،سائنسدان کہہ رہےہیں اس سال کوئی ویکسین نظرنہیں آرہی، اس سال اگر ویکسین نہیں آتی تو اس کا مطلب ہے کورونا کہیں نہیں جارہا، لاک ڈاوَن کا مطلب یہی ہے کہ لوگوں کو جمع ہونےسے روکا جاسکے، لاک ڈاوَن سے وائرس کو پھیلنے سے روکا جاسکتاہے لیکن کیا وائرس ختم ہوجائے گا ۔ عمران خان نے کہا کہ جہاں جہاں کیسز کم ہورہے تھے وہاں دوبارہ کیسز سامنے آرہےہیں ، لوگوں کو جب دوبارہ لاک ڈاوَن سے ریلیف ملتا ہے تو وائرس پھر پھیلنے لگتاہے، اس سال تو ہ میں اس کورونا وائرس کا مقابلہ کرنا ہے ، اس سال وائرس کے ختم ہونے کے امکانات کم ہیں ۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے مشکل سے 8ارب ڈالر کا پیکج دیا، امریکا نے 2200ارب ڈالر کا پیکج ،جاپان نے بھی ایک ہزارارب ڈالر کا پیکج دیا، پہلے دن سے موَقف ہے یورپ ، چین کی طرز پر لاک ڈاوَن نہیں کرسکتے، ہمارے یہاں یورپ ،چین سے غربت زیادہ ہے ۔ وزیراعظم نے کہا کہ جب تک ویکسین نہیں آجاتی اس وقت تک وائرس کنٹرول نہیں ہوسکتا، لاک ڈاوَن کی وجہ سے ڈھائی کروڑ لوگ گھروں میں چلے گئے ہیں ،ڈھائی کروڑ لوگوں کے پاس اور کوئی کمانے کاذریعہ نہیں ہے، پاکستان میں 15کروڑ لوگ کورونا لاک ڈاوَن سے متاثر ہیں ۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ لاک ڈاوَن میں نرمی ہماری مجبوری ہے ، ڈاکٹرز اوراسپتالوں پر دباوَ بڑھے گا، پاکستان میں کورونا وائرس ابھی مزید پھیلنے کا خدشہ موجود ہے ، ہم نے آج ان لوگوں کو روزگار دینانہ شروع کیا تو ان کے بھوک سے مرنے کا خدشہ ہے ۔ انھوں نے مزید کہا کہ باقی ممالک اپنی معیشت کو بچارہےہیں ، ہم اپنے لوگوں کو بھوک سے مرنےسے بچائیں گے ، ایک طرف ہ میں کورونا کو دیکھنا ہے تو باقی ملک کو بھی سنبھالنا ہے تاہم کورونا کی وجہ سے پاکستان میں دیگر بیماریاں نظرانداز ہورہی ہیں ۔ وزیراعظم کا کورونا صورتحال کے حوالے سے کا کہنا تھا کہ حکومت نے جو بھی قدم اٹھائے اللہ کا شکر ہے ان کی بدولت حالات کنٹرول میں ہیں ، ہمارا اندازا تھا 14مئی تک پاکستان میں 52695تک کیسز ہوں گے اور پاکستان میں ایک ہزار324 اموات کا خدشہ تھا تاہم 14 مئی تک 35ہزار700کیسز ریکارڈ ہوئے ، اموات 770ہوئیں ۔ عمران خان نے کہا کہ کورونا کے کیسز میں مزید اضافہ ہوگا اس کیلئے ہ میں تیار رہنا ہوگا ، ہماری صحت کی سہولتیں جون کے آخر تک کورونا کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں ، ہر 100 میں سے 4یا5مریضوں کو اسپتال جانے کی ضرورت ہوتی ہے ۔ کاروبار کھولنے سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ ایس اوپیز کےتحت کاروبار کھولنےوالامالک اقدامات کاذمہ دار ہوتا ہے ، ایس اوپیز پر عملدرآمد کرنا عوام کے لئے ضروری ہے، جس جگہ کیسز بڑھ رہے ہونگے ہ میں اس متعلقہ جگہ کو بند کرنا پڑےگا، مثال کے طور پر کسی فیکٹری سےزیادہ کیسز آئے تو اسے بند کرنا پڑے گا ۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ لاک ڈاوَن نرمی پر ایس اوپیز پر عملدرآمد کرنے کی شہریوں پر بڑی ذمہ داری ہوگی ، ہمارے پاس وسائل ہی نہیں کہ 15کروڑ لوگوں کا دھیان رکھ سکیں ،جب تک عوام خود احتیاط نہیں کریں گے حکومت کچھ نہیں کرسکتی ۔ ٹرانسپورٹ کھولنے کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ خدشہ ہے انٹرڈسٹرکٹ ٹرانسپورٹ کھولیں گے تو وائرس تیزی سے پھیلےگا، این سی سی کے تمام فیصلے مشاورت کے بعد کئے جاتےہیں ، ٹرانسپورٹ کھولنےسے متعلق پوری طرح فیصلہ نہیں ہوسکا ، ایک دو صوبوں کے خدشات ہیں کہ ٹرانسپورٹ کھولنےسے وائرس پھیلے گا ۔ انھوں نے کہا کہ پبلک ٹرانسپورٹ بند ہونے سے غریب کی زندگی مشکل میں آجاتی ہے، کورونا وائرس کی وجہ سے غریب طبقہ زیادہ متاثر ہیں ، صوبوں سےدرخواست کرتاہوں پبلک ٹرانسپورٹ کھول دیں ، پبلک ٹرانسپورٹ بند ہونے سے غریب کیساتھ معیشت پر بھی اثر پڑرہاہے ۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کورونا ریلیف فنڈ کے ذریعے پیر سے بیروزگاروں کوپیسہ منتقل ہوگا، کنسٹرکشن انڈسٹری کو ہر قسم کی سہولت دینے کی کوشش کی ہے، کنسٹرکشن انڈسٹری کھولنے کا مقصد تھا کہ لوگوں کو زیادہ سے زیادہ روزگارملے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں